عوام پر بجلی بم گرا دیا گیا بل 30تا40 فیصد ذائد آئیں گے۔رپورٹ انصرعباس

لاہور(اہم نیوز)نیپرا نے بجلی کے بلوں میں30 سے40 فیصد اضافہ کردیا، نیپرا نے تمام ڈسٹری بیوشن کمپنیوں کونیا ٹیرف بھجوا دیا ہے، بجلی کے بلوں میں اضافے کا نوٹیفکیشن جاری کردیا گیا ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق نیپرا نے بجلی صارفین کے بلوں میں30 سے40 فیصد اضافہ کردیا ہے۔ نیپرا نے باقاعدہ نوٹیفکیشن بھی جاری کردیا ہے۔
نیپرا نے لیسکو سمیت تمام کمپنیوں کونیا ٹیرف بھجوا دیا ہے۔ نیپرا نےبجلی صارفین کے بلوں میں اضافہ فیول ایڈجسٹمنٹ کے بجائے ٹیرف کوتبدیل کرکے کیا ہے۔ نوٹیفکیشن میں بتایا گیا ہے کہ آف پیک آورز میں فی یونٹ بجلی کی قیمت 9.30 سے بڑھا کر14.38ہوگئی ہے۔ دوسری جانب ادارہ شماریات نے بتایا ہے کہ مارچ کی نسبت اپریل کے مہینے میں مہنگائی میں 1.26فیصد اضافہ ہوا۔
اعدادو شمار کے مطابق گزشتہ 1 سال کے دوران بجلی کی قیمت میں 8.48 فیصد اور گھروں کے کرائے میں6 فیصداضافہ ہوا۔ وفاقی ادارہ شماریات نے جو اعداد و شمار جاری کیے ہیں ان کے مطابق اپریل کے مہینے میں چکن 9.9 فیصد مہنگا ہوا ہے جبکہ ادرک 9 فیصد اور چینی 6.76 فیصد مہنگی ہوئی ہے۔ اعدادوشمار یہ بتاتے ہیں کہ اپریل 2018 کی نسبت اپریل 2019 میں مہنگائی کی شرح میں 8.82 فیصد اضافہ ہوا۔
مارچ 2019 کے مقابلے میں اپریل 2019 میں کینو 50 فیصد، چینی 6.76 فیصد، گوبھی 23 فیصد، لیموں18.75فیصد، گاجر 54 فیصد اور ادرک 9 فیصد مہنگا ہوگیا جبکہ دالوں کی قیمتوں میں 9 فیصد اضافی ہوااورگھی کی قیمت میں 6 فیصد اضافہ ہواگیا ہے۔ ادارہ شماریات کے اعداد و شمار کے مطابق پیٹرول 6.46 فیصد، ہائی اسپیڈ ڈیزل5.38فیصد مہنگا ہوا ہے۔ اعداو شمار کے مطابق رواں سال جولائی سے اپریل تک مٹی کا تیل 24 فیصد، گیس 55 فیصد،پٹرول 22 فیصد تک مہنگا ہواہے۔
ٹرانسپورٹ سروس کے کرایوں میں 15.33 فیصد اضافہ ہوگیا ہے۔ وفاقی ادارہ شماریات کے مطابق گزشتہ 1 سال کے دوران بجلی کی قیمت میں 8.48 فیصد اورگھروں کے کرائے میں6 فیصد اضافہ ہوا۔ان اعدادو شمار کےعلاوہ اب ٹیلی کام سیکٹر میں بھی مہنگائی کی گئی ہے اور نیا ری چارج کرنے پر25 فیصد ٹیکس لگایا گیا ہے اور ٹیلی کام کمپنیوں نے خود بھی ائیرٹائم مہنگا کر دیا ہے۔


Notice: Undefined variable: aria_req in /home/ahemnew1/public_html/wp-content/themes/Ahmad Theme/comments.php on line 73

Notice: Undefined variable: aria_req in /home/ahemnew1/public_html/wp-content/themes/Ahmad Theme/comments.php on line 79

اپنا تبصرہ بھیجیں